Wednesday , October 22 2014
Latest
You are here: Home >> Blogs >> Who is Aafia Siddiqui

Who is Aafia Siddiqui

Born in Karachi, Pakistan, on March 2, 1972, Aafia was one of three children of Mohammad Siddiqui, a doctor trained in England, and Ismet, a homemaker. She moved to Houston on a student visa in 1990. She attended the University of Houston for three semesters, and then transferred to the Massachusetts Institute of Technology after being awarded a full scholarship.

Without going into the detail of her academic achievements I would like to address the dark the side of the picture. According to Aafia’s mother, Aafia left their home in Gulshan-e-Iqbal in a Metro-cab on 28 March, 2003 to catch a flight to Rawalpindi, but never reached the airport. When the family came out of their home, fifteen to twenty people, were waiting in three to four vehicles on the next street and subsequently kidnapped them. Aafia was placed into one car and the children into another.

Pakistani local papers mentioned reports the following day that a woman had been taken into custody of terrorism charges and confirmation came from a Pakistan Interior Ministry spokesman. The media reported that Aafia Siddiqui had been ‘picked up in Karachi by an intelligence agency’ and ‘shifted to an unknown place for questioning’. A year later, the press quoted a Pakistani government spokesman who said that she had been handed over to US authorities in 2003. No human rights activists dared to question the authorities of this illegal transfer of Aafia Siddiqui to US.

Aafia Siddiqui was accused of being a ‘courier of blood diamonds and a financial fixer for al-Qaida’. Wall Street Journal broke the story linking the woman involved in the 2001 diamond trade in Liberia (a story detailed by Douglas Farah, a senior fellow at the National Strategy Information Center, in his book Blood from Stones: The Secret Financial Network of Terror) to Aafia Siddiqui. According to family’s attorney, Elaine Whitfield Sharp that she was not brokering diamond deals for Al Qaeda with murderous brutes from the killing fields of Africa, but hosting play groups in her apartment. “Aafia Siddiqui was here in June 2001,” says Elaine Whitfield Sharp. “And I can prove it.”

In the case of Dr Aafia, the allegations were further clouded by the inaccurate, even hyperbolic descriptions of her by the media. Nobody tried to know what actually she was doing in the summer of 2001. Lets us have a look what she was actually doing.

During that week she was on her usual routine, picking Korans from a local mosque and distributing them to inmates in area prisons. She was hosting play groups in her apartment on the 20th floor of the Back Bay Manor in Roxbury. She took her sister Fowzia’s child into her care while Fowzia was busy in finishing a fellowship in neurology at Brigham and Women’s Hospital. How on earth a person can be in two different places at the same time?

FBI started with the idea that she was involved in the biochemical warfare. “They started with the whole idea that Aafia was involved in biochemical warfare,” says Sharp, her laywer. “She wasn’t taking brain cells and testing how they reacted to gases. But there’s all this news in the media about the changing face of Al Qaeda and the neurobiology scare, and now we’ve got this MIT graduate with a Brandeis Ph.D. who’s cooking up all these viruses.”

According to her Lawyer Aafia’s graduate work was based on a simple concept: that people learn by imitation. To study this, she devised a computer program and used adult volunteers, who came to her office and watched various objects move randomly across the screen, then reproduced what they recalled. The point was to see how well they retained the information having seen it on the screen.

According to Paul DiZio, a professor of cognitive neuroscience at Brandeis who was on Siddiqui’s dissertation committee “I can’t see how it can be applied to anything,” he says. “It’s not very applied work. It didn’t have a medical aspect to it. And, as a computer expert, she was competent. But you know, calling her a mastermind or something does not seem I never saw any evidence”

But professor was worried as he saw the only evidence against her was her passion of Islam. He said “She made many references to her faith in scientific conversations”. Professor further said “When presenting a proposal about how some results would come out and whether they would support her theory, she would say, ‘Allah willing’ ”

The Real Aafia

Talal Eid, imam of the Islamic Center of New England in Quincy, knew Siddiqui through the charitable work she did. He recalls her raising money for Bosnian orphans. “You know, we were all active, but to see a woman who was active in this way was really something nice.”

Siddiqui’s missionary work stemmed from her belief that it was her duty to bolster the Muslim community around her. A woman who was a student of Aafia said “She was always very frustrated here that Muslims were not addressing the needs of their community,” “She said we needed to be doing more to help our people and that we needed to address the needs of the community.”

The Mosque for the Praising of Allah in Roxbury is a simple brick building with a double arched doorway out front and a Middle Eastern café next door. Abdullah Faruuq, was the imam of the Mosque Let’s take a look what he has to say about Aafia. Imam said “What I know of her is that she was living here in America, and her organization was for sharing Islamic information with the American people.”

He further said that Aafia use to order Qurans and other books to be distributed to prisons and on school campuses. Boxes of them would arrive at mosque, and he would wait for her to come pick them up. Though she was a small woman but she never asked for help carrying the heavy boxes down the steep flight of stairs.

While at MIT, Aaffia joined an association for Muslim students. She wrote three guides for members who wanted to teach others about Islam. She use to explain how to run a daw’ah table, an informational booth used at school events to educate people about, and persuade them to convert to, Islam.

So is this was the major evidence FBI was looking for? She was punished for loving and doing efforts for Islam and now our sister is languishing in Texan jail, serving an 86 year sentence after being found guilty in a fabricated story. The way whole scene was sketched in the court was skeptical and more importantly, the evidence non-existent, no gunshot residue on her hands or clothes, no bullets from the discharged gun, no fingerprints belonging to  Aafia on the gun and other vital evidence removed by US military from the scene went missing before the trial. Brutal interrogation techniques were used to break her down.

Sometimes I wonder…. 50+ Muslim countries and one Aafia… Muslim countries with the richest natural resources… Pakistan, a country with nuclear capability, well trained Army … Detention of Aafia is a slap on the face of all Muslim Countries. Day is near my fellows when you and I will be questioned on the Day of Judgment and our eyes will be staring our feet with our heads down with shame!

 

4 comments

  1. pl tell about her nationality, married life and relationship with father.

    • Aafia is a citizen of Pakistan.
      Aafia was married to Amjad Khan, the father of their three children. He divorced her shortly after he married a second wife. She has not remarried.
      Aafia loved and respected her father.
      Such odd questions.

  2. ترجمہ۔۔۔ڈاکٹر عافیہ صدیقی کون ہیں؟۔۔۔………………………………………………………………………….
    ڈاکٹر عافیہ صدیقی۔2 مارچ، 1972 کو کراچی، پاکستان، میں پیدا ہوئیں، عافیہ محمد صدیقی، جوکہ انگلینڈ سے تربیت یافتہ ڈاکٹر، اور اسمیت سے تربیت یافتہ ڈاکٹر کے تین بچوں میں سے ایک تھی. وہ 1990 میں ایک طالب علم ویزا پر ہیوسٹن میں منتقل ہوئیں. وہ تین سمسٹرزہیوسٹن یونیورسٹی سے کرنے کے بعد اسکالر شپ (وظیفہ) پر میساچوسٹس انسٹی ٹیوٹ آف ٹیکنالوجی منتقل ہوگئیں.
    اس کی تعلیمی کامیابیوں کی تفصیل میں جانے کے بغیر میں تصویر کے تاریک پہلو کو حل کرنا چاہتا ہوں. عافیہ کی والدہ کے مطابق، عافیہ صدیقی نے گلشن اقبال میں میٹرو کیب میں ان کا گھر 28 مارچ، 2003 کو چھوڑ دیا راولپنڈی کی پرواز پکڑنے کے لئےنکلیں، لیکن ہوائی اڈے پر نہیں پہنچی تھیں. جب یہ خاندان کے پندرہ سے بیس افراد کیساتھ گھر سے باہر آئیں،تو اگلے سڑک پر تین سے چار گاڑیوں میں کچھ لوگ ان کا انتظار کر رہے تھے اور اس کے بعد انہوں نے ان کواغوا کرلیا. عافیہ کو ایک گاڑی میں دوسری میں بچوں کو رکھا گیا ہے.
    پاکستانی مقامی اخبارات کے مطابق ایک عورت کو دہشت گردی کے الزام میں تحویل میں لے لیا گیا تھا یہ بیان پاکستان کی وزارت داخلہ کے ترجمان کی طرف سے آیا ہے. میڈیا نے اطلاع دی ہے کہ عافیہ صدیقی کو گرفتارکیا گیا تھا کراچی میں ایک انٹیلی جنس ایجنسی کی جانب سے اٹھایا اور پوچھ گچھ کے لئے ایک نامعلوم جگہ پر منتقل کر دیا گیا ‘. ایک سال بعد، ایک پاکستانی حکومت کے ترجمان جنہوں نے کہا ہے کہ 2003 میں عافیہ کو امریکی حکام کے حوالے کر دیا
    کسی انسانی حقوق کے سرگرم کارکنوں نے امریکہ کی عافیہ صدیقی کی غیر قانونی منتقلی کےپر سوال اٹھانے کی ہمت نہ کی۔
    عافیہ پر ہیرے کی غیر قانونی منتقلی اور القائدہ کی مالی معاونت کا الزام لگایا گیا۔وال سٹریٹ جریدے نہ واضح کیا کہ 2001 میں ہیرے کی لائیبریا میں غیر قانونی تجارت کے حوالے سے(ڈوگلاس فرح جو کہ قومی معلوماتی حمکت عملی مرکز کی طالبہ تھیں نے اپنی کتاب(پتھر سے خون)۔۔۔میں واضح کیا۔۔۔کہ دہشت گردوں کی خفیہ مالی معاون۔۔عافیہ صدیقی۔۔
    ڈاکٹر عافیہ صدیقی کے معاملے میں الزامات میڈیا کی طرف سے غلط بتائے گئے۔اور گھر والوں کی معلومات کے مطابق وہ وہ کسی غیر قانونی تجارت میں ملوث نہ تھی اور نہ ہی کسی القائدہ کی مالی معاونت میں شامل تھی اور نہ ہی کسی خون میں ملوث ۔۔۔. 2001 ء میں وہ افریقہ میں موسم گرما میں کیا کر رہا تھی کسی یہ جاننے کی کوشش نہ کی بلکہ میڈیا کی جانب سے الزامات کی بارش کردی گئی۔۔کسی نے حقیقت نہ جاننے کی کوشش کی کہ وہ کیا کررہی ہے۔۔۔درحقیقت وہ مقامی مسجد سے قرآن لے کرجیلوں میں قید قیدیوں کو تقسیم کررہی تھیں۔۔ان کے ساتھ ہوٹل میں مقیم ۔۔ایلینی وٹفیلیڈ شارپ جو کہ رکسبری میں بییک مینر ہوٹل میں 20 نمبر فلور پر مقیم تھیں۔اورانہوں نے بتایا ٓ کہ وہ کھیلوں کے کھلاڑیوں کی میزبان تھیں اور اس کیساتھ اس کی بہن فوزیہ کےبچے کی دیکھ بھال کرتی تھیں کیونکہ فوزیہ برگھم اور خواتین کے ہسپتال سے تعلیم وتجربہ یعنی فیلوشپ حاصل کررہی تھیں عصبی سائنس میں،،،جس سے واضح ہوتا ہے کہ ایک شخص ایک ہی وقت میں دو مقامات پر کیسے ہوسکتا ہے۔۔.
    ایف بی آئی کا بیان ہے کہ وہ جیوراساینک یعنی بائیوکیمیکل ہتھیاربنانے میں اور کیمیائی جنگ کے ہتھیار کے الزام میں ملوث کیا گیا تھا جبکہ عافیہ کے وکیل کے مطابق”وہ دماغ کے پر جانچ کہ وہ کس طرح گیسوں پر رد عمل کا اظہار کرتے ہیں ۔جبکہ القائدہ کی بدلتی ہوئی حکمت عملی سے خوفزدہ ہوکر ان پر الزام لگایا گیا کہ وہ پی ایچ ڈی اور ایم آئی ٹی کی تعلیم کی آڑ میں بائیوکیمیائی وائرس تیار کرہیں ہیں. ”
    ان کے وکیل کے مطابق عافیہ کا کام کے ایک عام پریکسٹس کرنے والی بنیاد پر کیا گیا تھا: کہ جس طرح سے لوگ جانچ اور مشابہت کیلئے سیکھتے ہیں. اس کا مطالعہ کرنے کے لئے، انہوں ایک کمپیوٹر پروگرام وضع کیا اور بالغ رضاکاروں، جو اس کے دفتر میں آتے تھے اور مختلف اشیاء کی شبیہ سکرین بر جانچ کی غرض سے دیکھتے۔
    برانڈیس کے نیورو سائنس عصبی سائنس کے پروفیسر پال ڈی زیوکا بیان ہے کہ عافیہ صدیقی میں کوئی ایسی چیز میں نے نہیں دیکھی جو اس پر الزام لگایا گیا ہے ،بغیر کسی ثبوت کے اس کے متعلق کچھ نہیں کہا جاسکتا۔اور وہ ایک ماہر کمپیوٹر سائنس تھیں اور ایک نہائت قابل خاتون تھیں۔صرف اس کے خلاف یہ ثبوت ہے کہ وہ ایک جزبہ رکھنے والی مسلمان تھی۔۔میں حیران ہوں اس بات پر صرف کہ وہ ایک مسلمان ہے اسے مورد الزام ٹھہرایا گیا انہوں یہ بھی بتایا کہ ڈاکٹر عافیہ ایک راسخ عقیدہ خاتون تھیں اور کوئی بھی نظریہ یا مفروضہ سے پہلے وہ ایمان کا ذکر کرتی کہ اگر اللہ چاہے تو ایسا ہوگا۔۔یعنی سب اللہ کی مرضی پر ہے۔۔

    اصلی۔۔حقیقی عافیہ
    طلال عید، نیو انگلینڈ کے کوئنسی میں اسلامی سینٹر کے امام کا بیان ہے کہ جو خیراتی کام اس نے کیا وہ اس کے ذریعے صدیقی کو جانتا تھا. انہوں نے بوسنیائی یتیموں کے لئے امداد اور رقم اکٹھی کی۔حالانکہ ہم مرد حیران تھے کہ وہ کس قدر فکر مند اور سرگرم تھیں اپنے مسلمان بھائیوں کی مدد کیلئے۔یہ دیکھ کر ہمیں بہت اچھا لگا
    ارد گرد مسلم کمیونٹی کی حوصلہ افزائی کرتی تھیں ۔یہ کے ایک طالب علم تھی یہاں وہ بہت فکر مند تھیں کہ مسلمان اپنی کمیونٹی کی ضروریات پر دھیان نہیں کر رہے “،” انہوں نے کہا کہ ہمیں زیادہ اپنے لوگوں کی مدد کرنے کی ضرورت ہے۔
    رکسبری میں مڈل ایسڑن کیفے کے ساتھ اگلی جانب ایک اینٹون سے بنی مسجد کی عمارت ہے جہاں اللہ کی عبادت کی جاتی ہے۔اور عبداللہ فاروق اس مسجد کے امام ہیں کہتے ہیں کہ میں جانتا ہوں عافیہ یہاں امریکہ میں رہتی تھیں اور وہ اور اس کا ادارہ یہاں امریکی لوگوں کو اسلام کی دعوت اور معلومات فراہم کرتی تھیں۔وہ قیدیوں کو قرآن فراہم کرتی تھیں اور دوسری کتابیں اسی طرح سکولوں کے بچوں کو بھی اس طرح کتب فراہم کرتی تھیں۔
    ان کی کتب کے بکس مسجد میں آتے اور وہ چھوٹی خاتون ہونے کے باوجود کسی سے مدد طلب نہ کرتی اور اپنا سامان بکس اور کتابیں خود اٹھا کرسیڑھیوں سے لیجاتی تھیں۔حالانکہ وہ ایم آئی ٹی کی طالبہ تھیں لیکن پھر بھی انہوں نے مسلم طلباء کی ایک تنظیم کو بھی جوائن کررکھا تھا۔
    انہوں نے تین راہنمائی کی کتابیں لکھیں جس میں راہنمائی تھی کہ کس طرح دوسروں کو مخاطب کیا جائے اور اسلام کی دعوت دی جائے ۔وہ سکولوں میں بھی دعوت دیتی کہ اسلام قبول کیا جائے۔
    تو یہ ہیں وہ ثبوت کو ایف نی آئی کو مطلوب تھے؟۔۔۔اس کو اسلام کیلئے کی جانی والی کوششوں کی وجہ سے سزا دی گئی اور اسے ٹیکسان جیل میں بند کردیا گیا۔عدالت میں بھی ڈارامائی کاروائی کی گئی،نہ کوئی ثبوت نہ کوئی اسلحہ نہ کسی کو گولی ماری گئی نہ کسی کے انگلیوں کے نشان ہی تھے اور دوسرے حقائق اور ثبوت امریکی فوج سے مٹا دیے جب وہ قانونی کاروائی میں ناکام رہی۔اور 86 سال کی سزا سنائی گئی اور اس سے برے طریقہ سے پوچھ گچھ کی گئی۔۔میں حیران ہوں کے پچاس سے زائد اسلامی ممالک ہیں اور ایک عافیہ ہے۔۔مسلمانوں کے پاس بہت سے قدرتی وسائل ہیں اور پاکستان کے پاس ایٹمی صلاحیت اور باصلاحیت افواج۔۔لیکن بے سود

    عافیہ کی گرفتاری تمام مسلم ممالک کے چہرے پر تماچا ہے.وہ دن دور جب قیامت کے دن پر پوچھ گچھ ہوگی ہم سے ہماری بہن کے بارے میں اور اس دن ہماری آنکھیں شرم سے نیچے جھکی ہوں گی۔

  3. excellent article!! i wax realy in xearch of all thix info thanx fa it!! bt we cant do anythng lonely .. itx the musharaf’s cruel govrmnt who didnt xave n fight fa her!! itx high time now n our govrmnt ix xtill lying dead :-/ May Allah help Aafia …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*

You may use these HTML tags and attributes: <a href="" title=""> <abbr title=""> <acronym title=""> <b> <blockquote cite=""> <cite> <code> <del datetime=""> <em> <i> <q cite=""> <strike> <strong>